Subscribe Us

Razia Sultan: Sultan of Dehli

رضیہ سلطان

حقائق

c. 1205 تاریخ پیدائش:

جائے پیدائش: بڈاؤن، اتر پردیش، بھارت

وفات: 14 اکتوبر 1240

موت کا مقام: دہلی، دہلی سلطنت

خاندان: مملوک

دور حکومت: 10 نومبر 1236 سے 14 اکتوبر 1240 تک

شریک حیات: ملک التونیہ (م 1240-1240)

والدین: التمش، قطب بیگم

 

رضیہ سلطان پانچویں مملوک سلطان تھیں اور دہلی کی سلطان کی حیثیت سے حکومت کرنے والی واحد خاتون تھیں۔ وہ دہلی سلطنت کے تیسرے حکمران شمس الدین التمش کی بیٹی اور دہلی کے پہلے سلطان قطب الدین ایبک کی پوتی تھیں۔ اس نے انتظامیہ کی تربیت حاصل کی اور اپنے سگے بھائی ناصر الدین محمود کے انتقال کے بعد التمش کی ظاہری وارث بن گئی۔ تاہم، التمش کی موت کے بعد اس کے سوتیلے بھائی رکن الدین فیروز کو سلطان بنایا گیا تھا، لیکن بعد میں اسے حکمرانی کے لیے نااہل قرار دے کر قتل کر دیا گیا۔ اس کی وجہ سے رضیہ نئے حکمران کے طور پر سامنے آئیں۔ اس نے پردہ ترک کر دیا اور اپنی حکومت کے انتظام اور جنگ میں قیادت کرنے والی افواج دونوں میں ایک موثر حکمران ثابت ہوئی۔ اپنی تقریباً چار سالہ حکمرانی میں اس نے مناسب امن و امان قائم کیا، حکومتی اصلاحات کیں، بنیادی ڈھانچے میں بہتری لائی اور تجارت کی حوصلہ افزائی کی۔ اس کے سوتیلے بھائی معیز الدین بہرام نے خود کو بادشاہ ہونے کا اعلان کیا جب وہ بھٹنڈہ میں تھیں۔ اس نے اپنے شوہر ملک اختیارالدین التونیہ کی مدد سے دوبارہ اقتدار حاصل کرنے کی کوشش کی، جو کہ بھٹنڈہ کے ایک سردار تھے، لیکن وہ دونوں مارے گئے۔

Razia Sultan: Sultan of Dehli


  

بچپن اور ابتدائی زندگی

اس کے والد شمس الدین التمش ترکستان کے یوریشیائی میدانوں میں الباری قبیلے سے تعلق رکھتے تھے اور انہیں کم عمری میں ہی غلامی میں بیچ دیا گیا تھا۔ وہ اپنے آقا قطب الدین ایبک کا پسندیدہ بن گیا، جو مملوک خاندان کے بانی اور دہلی کے پہلے سلطان تھے۔ ایبک نے اپنی بیٹی قطب جان کی شادی التمش سے کی۔ جوڑے نے اپنی بیٹی رضیہ بیگم بنت کا استقبال کیا۔ شمس الدین التمش (رضیہ) ج۔ 1205، بڈاؤن، اتر پردیش، بھارت میں۔

 

رضیہ کا ایک مکمل بھائی ناصر الدین محمود تھا۔ بچپن سے ہی اسے حرم کی طاقت کو دیکھنے کا اعزاز حاصل تھا جس پر اس کی والدہ کا غلبہ تھا اور اس دربار کی بھی جہاں اسے اپنے والد التمش اور نانا ایبک دونوں کی پسند تھی۔ رکن الدین فیروز اور معیز الدین بہرام اس کے سوتیلے بھائی تھے جو سابقہ ​​لونڈیوں کے ذریعے پیدا ہوئے تھے۔ ایبک کا انتقال 1210ء میں ہوا جب رضیہ پانچ سال کی تھیں۔ ان کی جگہ ارم شاہ نے لی۔ التمش کو 40 ترک عمائدین کے ایک گروپ نے دعوت دی تھی جسے "چہلگانی" کہا جاتا تھا کہ وہ دہلی سلطنت کا تخت سنبھالیں کیونکہ وہ شاہ کے خلاف تھے۔ 1211 میں شاہ اور التمش کی ملاقات دہلی کے قریب باغ الجود کے میدان میں ہوئی جہاں سابق کو التمش نے شکست دی جو پھر دہلی سلطنت کا تیسرا حکمران بنا۔

 

رضیہ ایک بہادر نوجوان لڑکی کے طور پر پروان چڑھی جس نے اپنے بھائیوں کی طرح فوجی مہارت اور پیشہ ورانہ جنگ کی تربیت لی۔ التمش اپنی پسندیدہ بچی رضیہ کو اپنے اردگرد رہنے دیتا تھا جب وہ ریاست کے معاملات سنبھالتا تھا۔ اس نے اس بات کی تربیت بھی حاصل کی کہ اس وقت کی کچھ شہزادیوں کی طرح مرد حکمران کی غیر موجودگی میں سلطنت کو کیسے چلایا جائے۔ وہ اپنے کاموں اور فرائض کی انجام دہی میں اپنی مہارت اور استقامت سے اپنے والد کو متاثر کرنے میں کامیاب ہوئی۔

وارث ، تخت کی جانشینی۔

رضیہ کا مکمل بھائی اور التمش کا سب سے بڑا بیٹا، ناصر الدین محمود التمش کا ظاہری وارث تھا اور اس لیے اسے اپنے والد کی جانشینی کے لیے تیار کیا گیا تھا۔ ناصرالدین محمود بنگال کے گورنر بنے اور انہیں ان کے والد نے ملک الشرق (مشرق کا رب) کے خطاب سے نوازا۔ تاہم 1229 عیسوی میں اس کی اچانک موت کے بعد، التمش ایک قابل جانشین کے لیے پریشان ہو گیا کیونکہ اس نے محسوس کیا کہ اس کی دوسری بیویوں سے پیدا ہونے والے اس کے تمام بچ جانے والے بیٹے حکومت کرنے کے قابل نہیں تھے۔

 

رضیہ نے التمش کے ایک وفادار وزیر کے تعاون سے ایک قابل ریجنٹ کے طور پر کام کرکے اپنی صلاحیت کا مظاہرہ کیا جبکہ التمش نے 1230 میں گوالیار پر حملہ کرنے کے لیے دہلی چھوڑ دیا۔ ایک سال کے محاصرے کے بعد التمش نے گوالیار پر قبضہ کیا اور 1231 میں دہلی واپس آیا اور اپنی بیٹی کی کارکردگی دیکھ کر بہت متاثر ہوا۔ اس نے 1236 میں بستر مرگ پر ہوتے ہوئے رضیہ کو اپنا ظاہری وارث نامزد کیا اور اس کے ساتھ ہی اس نے تمام اصولوں کو توڑنے اور کسی خاتون کو جانشین مقرر کرنے والا پہلا سلطان بن کر تاریخ رقم کی۔ تاہم دربار کے رئیس ایک عورت کو حاکم بنائے جانے پر خوش نہیں تھے اور اس طرح رضیہ کی حمایت نہیں کی۔ 30 اپریل 1236 کو اس کے والد کی وفات پر اس کے سوتیلے بھائی رکن الدین فیروز کو مملوک سلطنت کا چوتھا سلطان بنایا گیا۔

 

نیا ولی عہد رکن الدین فیروز ایک خوددار شخص تھا اور اپنے آپ کو ذاتی لذتوں میں شامل کرتا تھا جس میں موسیقی میں حل کرنا اور بے حیائی شامل تھی جس کی وجہ سے مملکت کے لوگوں میں شدید غصہ پایا جاتا تھا۔ اس کی والدہ شاہ ترکان نے بطور بادشاہ اس کے غیر معمولی رویہ سے فائدہ اٹھایا اور تمام اختیارات اپنے ہاتھ میں لے کر حکومت چلانے لگی۔ شاہ ترکان ایک غاصب حکمران ثابت ہوا جس نے مملکت کے کئی لوگوں کو سزائے موت دینے کی ہدایت کی۔ آخرکار رکن الدین فیروز کو ایک نااہل حکمران سمجھا گیا اور 9 نومبر 1236 کو اسے اور اس کی والدہ کو قتل کر دیا گیا۔ اس کے بعد رئیسہ نے مملوک سلطنت کے پانچویں سلطان کے طور پر رضیہ کے تخت پر چڑھنے پر رضامندی ظاہر کی۔ اس سے وہ دہلی سلطنت کی پہلی اور واحد خاتون حکمران بن گئیں۔ اس کی تاج پوشی کی تقریب 10 نومبر 1236 کو ہوئی اور اس نے جلال الدین رضیہ کے نام سے حکومت کرنا شروع کی۔

  

بطور حکمران

رضیہ نے بطور حکمران اپنی کارکردگی کا ثبوت دیا۔ اس نے پردہ ترک کر دیا اور مسلمانوں کے لیے خواتین کا لباس بھی ترک کر دیا اور وہ لباس پہنا جو اس سے پہلے کے حکمران پہنتے تھے۔ تاہم قدامت پسند مسلمانوں کو شدید صدمہ پہنچا اور انہوں نے نقاب کو ترک کرنے اور عوام کے سامنے اپنا چہرہ دکھانے کے رواج کو توڑنے کے اس اقدام کو پسند نہیں کیا۔ اس نے اپنی حکومت کو کمال اور اعتماد کے ساتھ چلایا اور ساتھ ہی ہاتھی پر سوار ہو کر اور اپنی فوج کی سربراہ کی حیثیت سے لڑائیوں میں آگے سے اپنی افواج کی قیادت کر کے اپنی جنگی مہارت کا مظاہرہ کیا۔ اس نے نئے علاقوں پر قبضہ کر لیا اس طرح اس کی بادشاہی کو فروغ دیا۔

 

اپنے دور حکومت میں رضیہ نے حکومت میں اہم اصلاحات کیں اس طرح ایک قابل منتظم کے طور پر اپنی صلاحیتوں کا مظاہرہ کیا۔ اس نے اپنی سلطنت میں مناسب امن و امان قائم کیا اور کنویں کھود کر، سڑکیں بنا کر اور تجارت کی حوصلہ افزائی کرکے ملک کے بنیادی ڈھانچے کو بہتر بنانے کی کوشش کی۔ ایک سیکولر حکمران، رضیہ نے اپنے دور حکومت میں ہندو رعایا کی موروثی ثقافت کے تحفظ اور تحفظ کے لیے کوششیں کیں۔ اس نے غیر مسلموں پر عائد ٹیکس کو ختم کرنے کی کوشش کی، لیکن شرافت نے اس کی مخالفت کی۔ اس نے پبلک لائبریریوں کے علاوہ اسکول، تحقیق کے مراکز اور اکیڈمیاں قائم کیں جن میں قرآن اور پیغمبر کی روایات کے ساتھ ساتھ قدیم فلسفیوں کے کام بھی تھے۔ اسکولوں اور کالجوں نے بھی ادب، فلکیات، فلسفہ اور سائنس میں ہندو کاموں سے سبق سکھائے۔ وہ فن اور ثقافت کی سرپرست بھی تھیں اور موسیقاروں، شاعروں اور مصوروں کی حمایت کرتی تھیں۔ اس نے سکے منگوائے جن پر اس کا نام کندہ کیا جائے گا۔

 

ذاتی زندگی، اقتدار کا زوال، موت اور میراث

ملک اختیار الدین التونیہ رضیہ کے بچپن کے دوست تھے۔ بہت سے لوگوں کے مطابق دونوں بچپن کے پیارے تھے جو ایک دوسرے سے بہت پیار کرتے تھے۔ تمام تر مشکلات کے باوجود التونیہ نے اپنے دور حکومت میں اس کو موٹی اور پتلی سے مارا جس میں رکن الدین فیروز کی حکومت کے خاتمے میں اس کی مدد بھی شامل تھی۔ ان کی خدمات کا اعتراف رضیہ نے کیا جنہوں نے انہیں بٹھنڈہ کا گورنر بنایا۔ کچھ مورخین یہاں تک کہتے ہیں کہ یہ التونیہ کی مسلسل حمایت تھی جس کی وجہ سے رضیہ نے سلطنت پر کامیابی سے حکومت کی۔ اس طرح کی تجاویز کسی حد تک معنی رکھتی ہیں کیونکہ التونیہ کے بھٹنڈا جانے کے بعد ہی ترک امرا نے رضیہ کے خلاف سازش شروع کر دی۔ رضیہ کے دور حکومت کا زوال اس وقت شروع ہوا جب ترک رئیس، جو ایک خاتون بادشاہ کی حکمرانی سے ناراض تھے، جان بوجھ کر افواہ پھیلائی کہ رضیہ کو ایک افریقی سیدی غلام سے رئیس جمال الدین یاقوت سے جوڑ دیا گیا جو آہستہ آہستہ اس کا قریبی ساتھی بن گیا۔ اس طرح کی افواہوں نے التونیہ کو حسد میں ڈال دیا جس نے پھر رضیہ کے خلاف بغاوت کی، تاہم صرف اسے واپس لینے کے لیے۔ اس کے بعد رضیہ اور التونیہ کے درمیان جنگ ہوئی جس کے نتیجے میں یاقوت کی موت ہوئی اور التونیہ نے رضیہ پر قبضہ کر لیا۔ وقت کے ساتھ ساتھ محبت کرنے والوں نے اپنی غلط فہمیاں دور کر کے شادی کر لی۔

اس دوران جب رضیہ بھٹنڈہ میں تھی تو اس کے سوتیلے بھائی معیز الدین بہرام نے چالیس سرداروں کی حمایت سے خود کو مملوک خاندان کا سلطان قرار دیا۔ رضیہ نے اپنا تخت دوبارہ حاصل کرنے کی کوشش میں فوجیں جمع کیں اور التونیہ کے ساتھ دہلی کی طرف کوچ کیا۔ تاہم 24 ربیع الاول 638 ہجری (اکتوبر 1240) کو بہرام کے ہاتھوں انہیں شکست ہوئی۔ اگلے دن یہ جوڑا دہلی سے بھاگ کر کیتھل پہنچا، لیکن ان کی باقی فوجوں کے ہاتھوں ویران ہو گئے۔ 25 ربیع الاول 638 ہجری کو یہ جوڑا قتل ہوا۔

 

ان کی قبر کی اصل جگہ کے بارے میں تنازعہ ہے۔ جب کہ بہت سے لوگ کہتے ہیں کہ اسے ترکمان گیٹ، دہلی کے قریب بلبل خان کے ایک صحن میں دفن کیا گیا تھا، کچھ کہتے ہیں کہ یہ جگہ کیتھل میں ہے جہاں 1938 میں وائسرائے ہند لارڈ لِن لِتھگو ان کے مقبرے پر جانے کے لیے آئے تھے۔ ٹونک، راجستھان میں سائٹ۔

 

ان کی بائیوپک ’رضیہ سلطان‘ پر بنائی گئی جو 16 ستمبر 1983 کو ریلیز ہوئی اور اس میں بھارتی اداکارہ ہیما مالنی نے مرکزی کردار ادا کیا۔ ان کی زندگی پر ایک تاریخی ڈرامہ ٹیلی ویژن سیریز ’رضیہ سلطان‘ جس میں اداکارہ پنکھوری اوستھی مرکزی کردار ادا کر رہی ہیں، 6 مارچ 2015 سے ’اینڈ ٹی وی‘ میں نشر ہونا شروع ہوئی۔


Post a Comment

0 Comments