Subscribe Us

Anarkali : History and Mystery

 

Anarkali : History and Mystery

انارکلی: اسرار اور تاریخ

 

لاہور کے شاندار فن تعمیر اور ثقافتی-تاریخی خزانوں سے لطف اندوز ہوتے ہوئے، پنجاب سول سیکرٹریٹ کی جنوب مغربی باؤنڈری وال کے اندر واقع مغلیہ دور کے مقبرے کے پیلے سفید گنبد کی عظمت اور اسرار سے خوفزدہ ہونے میں کوئی مدد نہیں کر سکتا۔ اس مقبرے کو مشہور رومانوی کردار انارکلی کے آخری ٹھکانے کے طور پر جانا جاتا ہے، جو مغل بادشاہ اکبر اور اس کے بیٹے شہزادہ سلیم (جہانگیر) کی درباری تھی۔

 

انارکلی کے کردار نے ہمیشہ مورخین کو خاص طور پر اور عام لوگوں کو سسپنس، اسرار، خوف اور پرجوش رومانس کے مضبوط احساس کے ساتھ پریشان کیا ہے۔ انارکلی کی کہانی، اصل میں، ایک روایتی افسانہ ہے جو زبانی طور پر نسل در نسل سفر کرتی رہی ہے۔ جو بھی تحقیقی معلومات دستیاب ہیں ان سے یہ خیال کیا جاتا ہے کہ خاتون، نادرہ بیگم یا شرف النساء کی پیدائش کا تعلق بنیادی طور پر ایران سے تھا اور وہ تاجروں کے قافلے کے ساتھ لاہور آئی تھیں۔

 

چونکہ وہ بہت پرکشش تھی، اس نے اکبر کے دربار میں رسائی حاصل کی اور اپنے حسن کی بنا پر انارکلی کے لقب سے نوازا گیا۔ یہ واقعی حیرت انگیز ہے کہ نہ تو جہانگیر نے اپنی کتاب تزک جہانگیری میں اس کا تذکرہ کیا اور نہ ہی کسی معاصر مورخ نے اس کی کہانی کا کوئی سراغ چھوڑا۔

 

انارکلی کا پہلا تاریخی ذکر برطانوی سیاح اور تاجر ولیم فنچ کے سفر نامے میں ملتا ہے جو 1608 سے 1611 کے دوران لاہور آیا تھا۔ فنچ کے بیان کے مطابق انارکلی شہنشاہ اکبر کی بیویوں میں سے ایک تھی اور اس کے بیٹے کی ماں تھی۔ دانیال شاہ۔ اکبر کو یہ شبہ پیدا ہوا کہ انارکلی کے شہزادہ سلیم (جہانگیر) کے ساتھ بے حیائی کے تعلقات تھے اور اسی بنیاد پر اسے قلعہ لاہور کی دیوار میں زندہ دفن کر دیا گیا تھا۔ جہانگیر نے تخت پر چڑھنے کے بعد اپنے محبوب کی یاد میں موجودہ مقام پر یہ شاندار مقبرہ تعمیر کروایا تھا۔

دیگر مغربی زائرین، جو اگلی دو صدیوں کے دوران یہاں پہنچے، بشمول ہیگل، پرنس اور میسن، نے صرف دلکش باغات اور مقبرے کے دلکش فن تعمیر کا ذکر کیا، لیکن قبر میں دفن شخص یا انارکلی کے واقعے کے بارے میں کچھ نہیں بتایا۔

 

نور احمد چشتی نے اپنی کتاب تحقیق چشتیہ (1860) میں اپنے ذاتی مشاہدات اور روایتی کہانیوں کی بنیاد پر عمارت کی شان و شوکت اور انارکلی کے واقعہ کے بارے میں کچھ تفصیلات فراہم کی ہیں۔ وہ لکھتے ہیں، "انارکلی اکبر اعظم کی ایک خوبصورت اور پسندیدہ لونڈی تھی اور اس کا اصل نام نادرہ بیگم یا شرف النساء تھا۔ اکبر کی اس سے بے پناہ محبت نے اس کی دوسری دو خواتین کو انارکلی سے حسد اور دشمنی میں مبتلا کر دیا۔ اب بعض کہتے ہیں کہ اکبر دکن کے دورے پر تھا جب انارکلی بیمار ہو کر مر گئی اور باقی دو لونڈیوں نے شہنشاہ کے غضب سے بچنے کے لیے خودکشی کر لی۔ جب شہنشاہ واپس آیا تو اس نے اس عظیم الشان مقبرے کو بنانے کا حکم دیا۔ چشتی یہ بھی بیان کرتے ہیں: ’’میں نے سنگ مرمر کی وہ قبر دیکھی جس پر اللہ تعالیٰ کے 99 نام لکھے ہوئے تھے اور اس کے سر پر سلطان سلیم اکبر کا نام لکھا ہوا تھا۔‘‘

 

سید عبداللطیف نے اپنی کتاب تاریخ لاہور (1892) میں ذکر کیا ہے کہ انارکلی کا اصل نام نادرہ بیگم یا شرف النساء تھا اور وہ اکبر کی لونڈیوں میں سے تھیں۔ اسے شہزادہ سلیم اور انارکلی کے درمیان ناجائز تعلقات کا شبہ تھا اور اس لیے حکم دیا کہ انارکلی کو ایک دیوار میں زندہ دفن کر دیا جائے، اور بعد میں جہانگیر (سلیم) نے تخت نشین ہونے پر وہاں مقبرہ تعمیر کروایا۔ قبر پر فارسی میں جہانگیر کا ایک شعر لکھا ہے، ’’اگر میں اپنے محبوب کو صرف ایک بار دیکھ سکوں تو میں قیامت تک اللہ کا شکر گزار رہوں گا‘‘۔

  

تاریخ لاہور (1897) کے عنوان سے اپنی تالیف میں کنہیا لال لکھتے ہیں کہ نادرہ اکبر کے دربار میں ایک خوبصورت لونڈی تھی اور اسے اس کی گلابی رنگت اور دلکش حسن کی بنا پر انارکلی کے نام سے نوازا گیا تھا۔ اس کا یہ بھی خیال ہے کہ جب اکبر دکن کے دورے پر تھا تو اس کی موت قدرتی موت ہوئی۔ بعد میں اکبر نے یہ شاندار مقبرہ تعمیر کروایا لیکن سکھ حکمرانوں نے اسے تباہ کر دیا اور بعد میں انگریزوں نے اسے چرچ میں تبدیل کر دیا۔

 

18ویں صدی کے ایک مورخ اور معمار عبداللہ چغتائی نے ایک بالکل مختلف نسخہ پیش کیا ہے۔ ان کا خیال ہے کہ مقبرہ جو کہ بنیادی طور پر انار کے باغ کے بیچ میں بنایا گیا ہے، اس میں جہانگیر کی اہلیہ صاحب جمال کی قبر ہے جو انہیں بہت عزیز تھیں۔ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ اس خاتون کا نام فراموشی میں غائب ہو گیا اور اردگرد کے انار کے باغات کی بنیاد پر اس مقبرے کو لوگوں نے انارکلی کی قبر کا نام دیا۔

 

اس عمارت کا یکے بعد دیگرے برطانوی اور سکھ حکمرانوں نے استحصال کیا اور تاریخ کے مختلف مراحل میں اسے ایک پروٹسٹنٹ چرچ، ایک چھاؤنی، ایک سٹور ہاؤس اور رہائش گاہ میں تبدیل کر دیا گیا۔ اس کردار سے جڑی حقیقی رومانیت اور شاعرانہ خوبصورتی تب پیدا ہوئی جب امتیاز علی تاج نے انارکلی کے شہزادہ سلیم کے ساتھ پرجوش تعلقات اور اس کی آخری المناک موت پر ایک رومانوی ڈرامہ لکھا۔ اس کے بعد، تاریخی طور پر مشہور ہندوستانی فلم مغل اعظم نے کرشماتی اور ہونہار اداکارہ مدھوبالا کو افسانوی دلیپ کمار کے خلاف شہزادہ سلیم کے طور پر انارکلی کے طور پر پیش کرکے انارکلی کے کردار کو دیوی بنانے کے لیے ایک طویل سفر طے کیا۔

 

اگرچہ اس کردار اور مقبرے کے بارے میں دستیاب تاریخی حقائق مبہم اور مبہم ہیں لیکن تدفین کے حجرے کی جسامت اور شان و شوکت اور اس کے اندر ایک قبر کی موجودگی واضح طور پر بتاتی ہے کہ متوفی شخص کی بڑی اہمیت تھی۔ مزید یہ کہ لاہور میں نئی ​​انارکلی اور پرانی انارکلی کی ہلچل سے بھرپور بازار ہمیں کبھی بھی انارکلی کے کردار کو ایک طرف رکھنے کی اجازت نہیں دیں گے۔



Disclaimer: The image featured in this article is copyright of its respective owner.

Post a Comment

0 Comments